ڈاکٹر عبد القدیر خان ایٹمی سائنسدان پاکستان

‏ڈاکٹر عبدالقدیر خان 1936ء میں بھوپال (انڈیا) میں پیدا ہوئے

‏ڈاکٹر عبدالقدیر خان 1952ء میں پاکستان منتقل ہوئے

‏ڈاکٹر عبدالقدیر خان نے 1960ء میں کراچی یونیورسٹی سے میٹالرجی میں ڈگری حاصل کی

‏ڈاکٹر عبدالقدیر خان نے جرمنی اور ہالینڈ سے اعلیٰ تعلیم حاصل کی

‏1967 میں ہالینڈ سے میٹالرجی میں ماسٹر اور 1972 میں بیلجیم سے پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی

1976 میں ڈاکٹر عبدالقدیر خان نے پاکستان میں انجینئرنگ ریسرچ لیبارٹریز قائم کی

1981 میں لیبارٹری کا نام ڈاکٹر اے کیو خان ریسرچ لیبارٹری رکھا گیا

یہ ادارہ پاکستان میں یورینیم کی افزودگی میں نمایاں مقام رکھتا ہے

مئی 1998 میں ڈاکٹر عبدالقدیر خان نے پاکستان کو ایٹمی طاقت بنایا

ڈاکٹر عبدالقدیر خان نے 2000 میں ککسٹ نامی درسگاہ کی بنیاد رکھی

ڈاکٹر عبدالقدیر خان کو 1996 اور 1999 میں نشان امتیاز سے نوازا گیا

ڈاکٹر عبدالقدیر خان کو 1989 میں حلال امتیاز سے نوازا گیا

ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی لیبارٹری نے پاکستان کیلئے 1000 کلومیٹر دور تک مار کرنے والے غوری میزائیل سمیت چھوٹی اور درمیانی رینج تک مارکرنے والے متعدد میزائیل تیار کرنے میں بھی اہم کردار ادا کیا

اسی ادارے نے 25 کلو میٹر تک مار کرنے والے ملٹی بیرل راکٹ لانچرز، لیزر رینج فائنڈر، لیزر تھریٹ سینسر، ڈیجیٹل گونیومیٹر، ریموٹ کنٹرول مائن ایکسپلوڈر، ٹینک شکن گن سمیت پاک فوج کے لئے جدید دفاعی آلات کے علاوہ ٹیکسٹائل اور دیگر صنعتوں کیلئے متعدد آلات بھی بنائے

گذشتہ شب پھیپھڑوں کے مرض میں مبتلا ہوگئے تھے

ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی وصیت کے مطابق ان کی نماز جنازہ فیصل مسجد اسلام آباد میں ادا کی جائے گی

ان کی عمر 86 برس تھی

The Future of Agriculture through Technology

Author: Muhammad Sohaib

E-mail: m.sohaib897@gmail.com

Modernization is the most important tool which we are using in modern agriculture. In the world, food scarcity, labour shortage, and high cost from cultivation to harvesting has become serious issues. There must be some innovations so that we can face these challenges. In the last few years, there is some innovation in agriculture by means of which some improvement can be observed. In this regard, some modern technologies are discussed here.

Vertical farming in closed buildings:

This is entirely different from traditional farming. It can be defined as the method by mean of which we can grow crop or any ornamental plants in vertical layers. Since population of country is increasing haphazardly, and the world, specifically if we talk about developing countries is facing problem of shortage of land for farming purposes. In this regard, hydroponics is the latest addition in modern agriculture in which only water is used.

Soil is not main important here for plant growth. It only uses limited land and can increase the production of desirable crop. This type of farming is only used in urban areas where shortage of land is present. It can also be used in houses and offices etc. This technology not only give production but also gives pleasant environment in our closed building. Aeroponics and aquaponics are also latest inventions in this regard.

Vertical farming not only reduce space for cultivation but also reduce the manpower. But there is one disadvantage of this technology that it is very costly. However, research is being conducted in different departments to make improvement is modern indoor farming.

Farm Automation or Smart Farming:

It is the new technology that makes farms more effective and mechanises the crop production. Different companies are working to make innovation in drones, tractors, and robotic system. These companies are motivating farmers to make innovation in their farms. agriculture. The main objective of farm mechanization machinery is to make routine tasks easier. Some main technology that is being used in this regard is Harvest robotics, self-sufficient tractors, drones, and seeding and weeding equipment’s.

This technology can reduce the labour and make the task more efficient but there is one problem and that is it is costly.

Technology in livestock farming:

The raising of domesticated animal for use or some other purpose is called livestock farming.

In the traditional livestock there are many factors that are widely forgotten and sometimes it can be fatal to animals. Livestock gives necessary renewable and natural resources that we use in every day. There are different types of livestock rising like poultry farms, dairy farms, cattle ranches, or other livestock-related agribusinesses. Livestock managers must work hard in their farm in which they keep record, care and feeding of livestock. But from the past few years, new technology has changed the scenario of livestock.  

The concept of the ‘connected cow’ is a result of more and more dairy herds being fitted with sensors to monitor health and increase productivity. Putting individual wearable sensors on cattle can keep track of daily activity and health-related issues while providing data-driven insights for the entire herd. All this data generated is also being turned into meaningful, actionable insights where producers can look quickly and easily to make quick management decisions.

Progressive greenhouses:

In recent times, the greenhouse industry has been converting from minor scale services used primarily for research and aesthetical purposes (i.e., botanic gardens) to significantly more large-scale facilities that compete directly with land-based conventional food production.

Nowadays, in large part due to the tremendous recent improvements in growing technology, the industry is witnessing a blossoming like no time before. Greenhouses today are increasingly emerging that are large-scale, capital-infused, and urban-cantered.

As the market has grown dramatically, it has also experienced clear trends in recent years. Modern greenhouses are becoming increasingly tech-heavy, using LED lights and automated control systems to perfectly tailor the growing environment. Successful greenhouse companies are scaling significantly and located their growing facilities near urban hubs to capitalize on the ever-increasing demand for local food, no matter the season. To accomplish these feats, the greenhouse industry is also becoming increasingly capital-infused, using venture funding and other sources to build out the infrastructure necessary to compete in the current market.

Precision Agriculture:

The application of modern information technologies to provide, process and analyse multisource data of high spatial and temporal resolution for decision making and operations in the management of crop production.

Agriculture is undergoing an evolution – technology is becoming an indispensable part of every commercial farm. New precision agriculture companies are developing technologies that allow farmers to maximize yields by controlling every variable of crop farming such as moisture levels, pest stress, soil conditions, and micro-climates. By providing more accurate techniques for planting and growing crops, precision agriculture enables farmers to increase efficiency and manage costs.

Artificial Intelligence:

The rise of digital agriculture and its related technologies has opened a wealth of new data opportunities. Remote sensors, satellites, and UAVs can gather information 24 hours per day over an entire field. These can monitor plant health, soil condition, temperature, humidity, etc. The amount of data these sensors can generate is overwhelming, and the significance of the numbers is hidden in the avalanche of that data.

The idea is to allow farmers to gain a better understanding of the situation on the ground through advanced technology (such as remote sensing) that can tell them more about their situation than they can see with the naked eye. And not just more accurately but also more quickly than seeing it walking or driving through the fields.

Remote sensors enable algorithms to interpret a field’s environment as statistical data that can be understood and useful to farmers for decision-making. Algorithms process the data, adapting and learning based on the data received. The more inputs and statistical information collected, the better the algorithm will be at predicting a range of outcomes. And the aim is that farmers can use this artificial intelligence to achieve their goal of a better harvest through making better decisions in the field.

Importance of agriculture in Pakistans economy and development

Introduction:

“Agriculture is the of process of cultivation of land or soil for production purpose”. Agriculture plays a very vital role for economy of Pakistan and its development. 48% of labour force is engaged directly with agriculture. So it is the main source of living or income of the major part of economy population. About 70% of population is relates to agriculture directly or indirectly. Agriculture is the major source of food of huge population of Pakistan. Agriculture is also the major source of provision of raw martial to industrial sector of Pakistan. Its contribution towards GDP is about 25% which is higher than contribution of any other sector. Following are the main points of importance of agriculture for Pakistan economy.

Source of employment:

Pakistan as developing economy the employment on consistent level has much importance. In this behalf agriculture has much importance because it provides employment directly or indirectly to the public. Employment directly affects the GSP of economy as well as the per capita income. With the increase in per capita income living standard increases, higher hygiene facilities & better education facilities are also increases. All these signs are the factors of economic development. So we can say that agriculture has a great contribution toward economic development by providing the employment.

Food requirement:

Population growth rate of Pakistan is increasing rapidly. According to UNDP human development report population growth rate of Pakistan is 2% per year. So with the rapidly increasing population the food requirement is also increasing rapidly. In this behalf agriculture is the only the major sector which is the meeting the increasing requirement of food. It also reduces the import of food from other economies. So we can say that agriculture sector is playing very vital role in development of Pakistan by providing the food for massive population as well as supporting the economic growth.

Contribution in exports:

Major exports or cash crops of Pakistan are wheat, rice and cotton. 9.8 billion Bales of cotton are produced per year. Rice crop is produced 4.3 million ton per year. These agricultural commodities are exported to various countries against foreign exchange. This foreign exchange is utilized for the import of industrial or technological equipments such as machinery or automobiles. Further this foreign exchange is utilized to improve the infrastructure of economy or for improving the other sector of economy like education, health and investments.

Raw material for industries:

Industries have great importance for the development of any country specially for developing economies like Pakistan. Industries need raw material to produce finish goods. In Pakistan agriculture provides raw material to industries. Cotton is very important agricultural production which is also major export of Pakistan. It is used as raw material in textile industries. The production of these textile industries is exported to various countries against foreign exchange. Live stock is also an agricultural sector. It also plays very important role to export goods by providing the raw material to various industries like sports goods industries and leather industries. So in this way agriculture helps to Pakistan economy and its growth toward development.

Infrastructural development:

Infrastructure plays very important role to development of any economy. It is fuel to the economy development. Well organised infrastructure is a key to development because of quick means of transportation of agricultural goods or commodities (raw material or finish goods) and communication. On distribution purpose of agricultural products good and quick means of transportation are required this intends to improve the infrastructure rapidly. So agriculture play important role to the development of transportation for the purpose of distribution of goods.

Increase in GDP level:

Agriculture has huge contribution toward GDP of Pakistan economy. it contributes about 25% of total GDP, which is larger than other sectors of Pakistan. Increase in GDP shows the developing progress of the economy. It has played very important role since independence toward GDP of Pakistan. Now agriculture is the 3rd largest sector of contributing to GDP. Live stock and fisheries are the huge sector of agriculture in order to providing the employment. Employment contribute to GDP, it is as with the increase in employment the per capita income will increase which results to increase in GDP rate of the economy.

Decreasing in rural poverty:

Agriculture sector has played very important role in order to reduction of rural poverty. Since 1975 to 2000 the GDP growth rate of agriculture was about 4.1% per year. Green revolution technology in irrigation, improved seeds and fertilizers played very vital role to increase the agricultural production which results in increase in GDP. Through this technology farmers with land gain the opportunity to increase their production. So in this way arable lands became cultivated lands and farmers got the market of agricultural products against some return.

Development of banking sector:

Agriculture has also contributed a great role toward the development of banking sector. As the government realized the importance of agriculture, it takes steps to improve the productivity of crops by providing the credit facilities to the farmers at low interest rates. With utilizing these credits farmers can produce more and more crops. For this purpose government established the ZTBL and other financial institutes for the provision of credit facilities. So in this way development of banking sector takes place.

Farm mechanization:

Introduction of farm mechanization in agricultural sector had played very effective role in the development of economy. With the use of modern machinery in agricultural lands causes more and high quality production of crops. So the provision of raw material to the industries increases. Due to increase in productivity level the export rate of major export crops is increased which causes foreign exchange and economic development.

Use of Nanotechnology:

In agricultural sector use of modern technology like nanotechnology has played very vital role in the development of economy. This technology is used for producing the high yielding variety with high quality products. High quality products results into high rate of return to the farmers and the per capita income of farmer increases. Increase in per capita income shows the growth of economy toward development.

Role of dairy farming:

Dairy farming from agricultural sector has also played a great role in economic development. Livestock or dairy farming has huge contribution toward economic growth. The annual protein per capita is 18 kg of meat and 155 litters of milk. This is the highest rate in South Asia. Milk and meat and their by products have a good market. Farmers can receive a good return by producing and providing these products to the market. This process results into increase in per capita income as well as increase in national income of the economy.

Role of textile industries:

In economic development textile industries plays very important role. These industries totally depend on agriculture production in raw form. Cotton is the major crop which is used as raw material for these industries for production purpose. Further these products are exported to many economies against foreign exchange. So cotton as raw material from agriculture side contributes toward increase in NI (National Income). Textile industries also provide employment level which increases the per capita income of the person. So we can say that contribution of textile industries in the development of economy has much importance.

Role of sugar industries:

Sugar industry is also one of the major sectors of economy which has great importance according to development of economy. This is totally agricultural based industry. Sugar cane is produced on very large scale in many areas of Pakistan. This further supplies to sugar industries for the production of sugar and other by products which has great market. As large scale industries these also helps to provide employment level to the public. This results into increase in per capita income as well as improves living standards.

Rice Export Corporation:

Many areas of Pakistan have much importance according to the production of rice crop. In some areas the world most famous rice crop is produced. A huge quantity is exported to many economies against foreign exchange. This foreign exchange is further utilized in import of some other products like modern technology or machinery or this is utilized for the improvement of infrastructure of the economy.

Role of fishery:

Fishing industry plays very important role in the development of national economy. With a coastline of 814 km Pakistan has enough resources for that remains to fully development. This is also the major export of Pakistan.

Forestry:

About 4% of land is covered with forests in Pakistan. This is the major source of paper, lumber, fuel wood, and latex medicine. It is also used for the purpose of wildlife conservation and ecotourism.

Measure to improve the efficiency of agricultural sector for development of economy:

Yield collection problems:

The collection of yield from small farmers is very expensive & difficult process. So it is a great problem of marketing. There should be some easy way for collection of yield from the farmers.

Rough grading Products:

Commodities or products which are graded have higher price in the market. In Pakistan mixing of poor & good qualities are common. So grading problems must reduce.

Storage problems:

The storage facilities in markets are not enough, seller can not store & wait for a higher price of the product due to lack of warehouses. Because of this some perishable produce suffers loss.

Middleman’s role:

The middleman takes a big share of farmer crop without doing anything. The farmers borrow the money from them & sell their products at low prices. So this is a big loss to the farmers.

Transportation problems:

Our sources of transportation are insufficient, so regular supply of product is not possible to the market. The village are not properly linked to the markets. For proper provision of products to the market their must be sufficient as well as fast means of transportation.

Revenue system:

Our farmers have to pay land revenue after the harvesting of each crop, so it forces the farmers to sell their produce at low price.

Market Advisory Committee (MAC):

MAC (Market Advisory Committee) at district and tehsil level should be set up to provide technical advice and information to co-operative marketing societies. The officers of co-operative & agriculture department should be the members of the

WhatsApp +92300899805

Shahid Siddique

Importance-of-agriculture-in-Pakistans-economy-and-development by Shahid Siddique Joyia

Chinese Scientists Find Key Gene to Save Fertilizer for Crops

Chinese scientists have found a key gene in crops that make them more efficient in utilizing nitrogen fertilizer, which will help reduce the use of fertilizer.

The application of nitrogen fertilizer is an important measure to increase the yields of crops such as rice and wheat. However, a large amount of nitrogen fertilizer also brings about ecological problems such as soil acidification and agricultural greenhouse gas emissions.

Scientists from the Institute of Genetics and Developmental Biology under the Chinese Academy of Sciences analyzed the mechanisms underlying the nitrogen-use efficiency of crops and confirmed that the gene GRF4 is a positive regulator of plant nitrogen metabolism.

After increasing the expression of GRF4, crops maintained a high-yield trait while nitrogen use efficiency increased significantly.

The research enables novel breeding strategies for sustainable agriculture, according to the research team.

Muhammad Shahid Siddique ssiddique560@gmail.com +923008998805

Rice Crop

جذباتی قوم کی امیدیں اور منہ زور مہنگائی

نکاح سے چند ساعت قبل قاضی نے اسٹیج پر کھڑے ہو کر سب کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اگر کسی کو اس نکاح پر اعتراض ہے تو ابھی بتا دو۔آخری کرسی پر تشریف رکھے ہوئے ایک خوب صورت دو شیزہ اپنے نوزائیدہ بچے کو گود میں لئے اٹھی اور اسٹیج کے نزدیک آ کر کھڑی ہو گئی۔یہ منظر دیکھتے ہی دلہن نے دلہا کو زدو کوب کرنا شروع کر دیا،دلہن کا والد اپنی بندوق لینے گھر کی طرف دوڑا۔دلہن کی ماں اسٹیج پر ہی بے ہوش ہو گئی،سالیوں نے بھی دلہا میاں کو لعن طعن کرنا شروع کر دی،اور سالے آستینیں چڑھانے لگے۔اتنے میں قاضی نے لڑکی سے پوچھا کہ
”بتاؤ بیٹی آپ کا کیا مسئلہ ہے“
لڑکی بولی قاضی صاحب پیچھے آواز نہیں آرہی تھی اس لئے میں یہ پوچھنے کے لئے آگے آئی ہوں کہ آپ کیا فرما رہے تھے؟
لہذا اس میں کوئی شک نہیں کہ ہم ایک جذباتی قوم ہیں،نہ ہی مسئلہ سے قبل سوچتے ہیں اور نہ ہی مسئلہ پیدا ہونے کے بعداس کا بس لوگوں کے کہنے پر کہ کتا تمہارا کان کاٹ کر لے گیا ہے،ایک دم کتے کے پیچھے بھاگنا شروع ہو جاتے ہیں،اپنا کان نہیں دیکھتے کہ جسم کے ساتھ ہے بھی کہ نہیں۔کسی بھی ایرے غیرے نے ایک نعرہ دیا،بلا سوچے سمجھے اس کے پیچھے زندہ باد ،زندہ باد کی صدائیں بلند کرنا شروع ہو جاتے ہیں۔ہم یہ بھی نہیں سوچتے کہ اس شخص کا ماضی کیا تھا؟اس سے قبل کتنی بار ملکی سیاست و معیشت کے ساتھ کھیل چکا ہے۔
بس آوے ای آوے گا کے نعرے بلند کر دیتے ہیں۔اسی وجہ سے یہ لوگ قوم میں شعور بیدار نہیں ہونے دیتے۔کہ اگر اس سوئی ہوئی قوم کا شعور جاگ گیا تو ہمارے سامنے غلاموں کی طرح ہاتھ باندھے کون کھڑا ہوگا۔انہیں قوم اور ملک و ملت سے کوئی سروکار نہیں بس اپنی سرکار سے ہے۔اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اگر ایسا ہی پچھلی سات دہائیوں سے ہوتا چلا آرہا ہے تو اس کا حل کیا ہے؟
میری نظر میں اس کا ایک حل ہے اور وہ یہ ہے کہ امیدوں کے چراغوں کو گل کردیا جائے۔
یعنی ایسے افراد سے اپنی امیدیں باندھ کر اپنی خواہشات کی تذلیل نہ کروائیں۔کیونکہ ازل سے پیدا شدہ کجی ایک روز میں درست نہیں ہو سکتی۔یہ حل میں نے چند روز قبل انڈین فلمسٹار سنجے دت کے ایک انٹرویو سے سیکھا۔اس کا کہنا یہ تھا کہ جیل نے مجھے ایک سبق سکھایا کہ کسی پر کبھی کوئی امید نہ رکھو۔اس کا فلسفہ بہت پر امید تھا ،اور وہ یہ تھا کہ کسی اور سے امید لگا بیٹھنا کہ وہ میرے لئے یہ کر دے گا،وہ کردے گا،سب امیدیں انسان کو اندر سے کمزور کر دیتی ہیں۔
اس لئے کہ امید لگائے بیٹھنے والا انسان دوسروں پر خود کو منحصر کر لیتا ہے۔اور جو کسی اور پر انحصار کرنا شروع دیتے ہیں وہ تازیست اپنے اندر خوابیدہ صلاحیتوں کو بیدار کرنے میں ناکام رہتے ہیں۔وہ خود کو کبھی بھی پہچان نہیں پاتے۔اور ایسا ہی ہوتا ہے کہ ہمارے ملک میں سیاست سے ہٹ کر بھی آپ سب نے مشاہدہ کیا ہو گا کہ گھر میں جو کوئی فردِ خانہ اپنی ذمہ داریوں کو پہچان کر چلے،سمجھو اس کی شامت آگئی ہے۔
ہر کوئی اسی پر تول و قناعت کر کے بیٹھ جاتا ہے۔اگر گھر میں موجود کسی کاہل و آلکس سے پوچھیں کہ وہ کوئی کام کیوں نہیں کرتا تو اس کا سیدھا جواب ہوتا ہے کہ بڑا بھائی ملک سے باہر گیا ہوا ہے۔گویا بڑا بھائی بھی انہیں امید دلانے میں شامل ہوتا ہے۔یہی برادر اکبر اگر شروع دن سے ہی اپنے تعاون سے انکار کر دے تو دیگر اہل خانہ کی امیدیں کبھی جڑ نہیں پکڑیں گی۔
لہذا نہ امید لگائیں اور نہ ہی کسی کو امید دلائیں۔یہ بہت سے مسائل و معاملات کا حل بھی ہے اور قوم کے لئے آگے بڑھنے کے لئے مہمیز بھی ہے۔اب آتے ہیں عوامی امیدوں کی طرف جو ہم ہر نئی حکومت سے لگا بیٹھتے ہیں۔
گذشتہ تین برسوں میں تسلسل سے قیمتوں میں گرانی اور اشیائے خورونوش کی مہنگائی کا صدر مملکت نے ایک آرڈیننس کے ذریعے نوٹس تو لیا ہے۔
اس آرڈینیننس کا نام ہے پاکستان فوڈ سیکیورٹی فلو اینڈ انفارمیشن آرڈیننس۔اس حکم نامہ کا مقصد یہ ہے کہ بلاجواز مہنگائی،ذخیرہ اندوزی،ملاوٹ و دیگر اسی طرح کی سماجی برائیوں پر چھ ماہ کی قید و جرمانہ یا دونوں سزائیں دی جا ئیں گی۔دیر آید درست آید،لیکن ہماری قوم کا یہ مسئلہ نہیں ہے کہ صدر نے کوئی آرڈیننس جاری کردیا ،وزیر اعظم نے کابینہ کے اجلاس میں نوٹس لے لیے یا پھر چیف جسٹس نے سو موٹو نوٹس لے لیا۔
مسئلہ یہ ہے کہ بلی کے گلے میں گھنٹی کون باندھے گا۔حلقہ ارباب اقتدار حکم نامہ تو جاری کر دیتے ہیں لیکن عملی اطلاق کے فقدان کی وجہ سے ہاتھی کے پاؤں میں سب کے پاؤں آ جاتے ہیں۔اور مسئلہ یوں کا توں ہی رہتا ہے اور اسی توں اور یوں کے درمیان عوام میں تو تو میں میں ہو جاتی ہے۔آرڈیننس کے جاری ہوتے ہی تحصیل سے ڈویژن کی سطح تک افسر شاہی مکمل حرکت میں آچکی ہے اور وہ بھی سوشل میڈیا کی حد تک۔
یعنی مارکیٹ کا چکر لگایا،چند تصویر بتاں لی ،اپلوڈ کیں اور اللہ اللہ خیر سلا۔گویا سابق حکومتوں اور حالیہ حکومت کے رویوں اور عملی اطلاق میں کوئی فرق نہیں۔تبدیلی تو تب ہو جب گذشتہ سے کچھ ہٹ کر اور بہتر ہو۔اگر حالیہ حکومت نے بھی سابقہ حکومتوں کی طرح مکھی پر مکھی ہی مارنا ہے تو پھر بلی بی ہم لنڈورے ہی بھلے۔کیونکہ جب تک ہم عوام حکومت،افسر شاہی اور اداروں پر امیدیں باندھے رکھیں گے تب تک نظام بدلنے والا نہیں ۔لہذا اگر ہم چاہتے ہیں کہ مہنگائی قابو میں آجائے تو امید قائم کرنے کی بجائے عملی اطلاق کا سبب پیدا کرنا ہوگا۔اور اس کے لئے سال نہیں سالوں کی تپسیا چاہئے۔کیونکہ
وقت کرتا ہے پرورش برسوں
حادثہ ایک دم نہیں ہوتا

Shahid Siddique (شاہد صدیق)

Brexit paves the way for gene-edited cropsBy Pallab Ghosh

The UK government is to relax the regulation of gene-edited crops to enable commercial growing in England.

The plants are to be tested and assessed in the same way as conventional new varieties.

The changes are possible because the UK no longer has to follow European Union regulations, which are the strictest in the world.

The Scottish, Welsh and Northern Irish governments will get to decide whether to adopt or opt out of the changes.

Environment Secretary George Eustice said that he would be working closely with farming and environmental groups to help grow plants that are stronger and more resilient to climate change.

“Gene editing has the ability to harness the genetic resources that nature has provided. It is a tool that could help us tackle some of the biggest challenges that we face.”

Gene-edited (GE) crops have much simpler genetic alternations than so-called genetically modified (GM) ones. GM crops often involve the addition of extra genes, sometimes from a completely different species; and in some instances the insertion of DNA from animals.

Gene-edited crops, by contrast, often just have genes snipped out of them, producing new varieties within months that could also have been produced by traditional cross-breeding but over a period of several years.

Scientists believe that they can use gene editing to develop fruit, vegetables and cereals that are more nutritious and productive, as well as hardier varieties that can withstand the extremes of weather brought about by climate change.
But Dr Helen Wallace, of the campaign Group Genewatch, described the changes as a “weakening of standards meant to protect human health and the environment”.

“People won’t be fooled. GM crops are GM crops. Whether they are made with new or old techniques, they can lead to unintended consequences.

“GM crops that withstand climate change have been promised for more than 40 years, but have never been delivered. 90% of GM crops that are grown today are engineered to withstand blanket spraying with weedkillers that are harmful to butterflies and frogs. New gene-edited crops won’t be any different and will cause the same environmental problems.”

Liz O’Neill, director of GM Freeze, said the government “wants to swap the safety net of proper public protections for a high-tech free-for-all”.

“This announcement is described as a response to Defra’s consultation on the regulation of genetic technologies. However, no detail has been made available on what George Eustice actually learnt from the exercise.

“The consultation submissions that GM Freeze has seen raised a wide range of concerns about Defra’s proposals for dismantling GM safeguards, but this announcement suggests the minister isn’t listening.”


Rasheed says ECP, govt getting closer on electronic voting machines

Interior Minister Sheikh Rasheed  said Monday the PTI-led government and the Election of Commission of Pakistan (ECP) are coming closer on the issue of holding the next general elections via the electronic voting machines (EVMs).

Sheikh Rasheed

“It is a positive development that the Judo, Karate between the federal government and the ECP is decreasing,” he said, while addressing a press conference in Islamabad.

Federal Minister for Information and Broadcasting Fawad Chaudhry and Federal Minister for Railways Azam Swati had levelled serious allegations against the ECP and the chief election commissioner, and as a result, the body had sent notices to both the government officials — who are yet to respond.

“The relationship between the government and the election commission should get better as it would facilitate in holding free and fair elections,” the interior minister said.

Predictions about split in PML-N

Rasheed addressed the Leader of the Opposition in the National Assembly and PML-N President Shahbaz Sharif, saying that the next general elections would be held in a “free, fair, and transparent manner.”

Speaking further about the PML-N, he claimed that the party would not be divided into two, but three factions in the near future, amid reports of conflict between the top leadership in the party.

PML-N stalwart Khawaja Asif, addressing a workers convention in Rawalpindi a day earlier, had urged party workers to create unity within their ranks.

“There is no dispute at the leadership level. Any discord that exists at the local level, must be put to rest. We must have unity if we wish to win the government mandate come election time,” he had stressed.

Nawaz Sharif’s fake COVID vaccine entry

Moving on, he said Pakistan’s passport, identity card, and vaccination campaign were being maligned as part of a “conspiracy”.

On PML-N supremo Nawaz Sharif’s fake COVID-19 vaccination entry, he said the National Database Registration Authority (NADRA) was not to blame, as it had issued vaccination certificates to as many as 7.5 million people.

A fake coronavirus vaccine entry was made in the National Immunisation Management System (NIMS) using Nawaz’s name at the Government Kot Khawaja Saeed Hospital in Lahore on Wednesday, September 22.

As per the fake entry, Nawaz, who is currently in London, got his first shot of the COVID-19 vaccine Sinovac at 4:03pm on Wednesday last week at the hospital.

Suspension of mobile phone services

Talking about the suspension of mobile phone services on account of Chehlum of Imam Hussain (RA), the interior minister said it would remain suspended in some areas, while it can be suspended in further places on the request of provincial governments and district administrations.

Quaid Azam or Pakistan Historical Update

🇵🇰[#قائداعظمکیزندگیتاریخکےآئینےمیں#🇵🇰
‏25 دسمبر 1876:ولادت جھرک/کراچی.
‏1882:ابتدائی تعلیم کا آغاز.
‏1893:انگلستان روانگی.
‏1896:بئریسٹر میں کامیابی.
‏1897:وطن واپسی.
‏1897:وکالت کا آغاز.
‏1900:بحیثیت پریزیڈنسی مئجسٹریٹ تقرری.
‏1905:دادا بھائی نودو بھائی کے پرائیویٹ سیکریٹری مقرر ھوۓ.
‏1906:ممبئی ھائیکورٹ میں بحیثیت ایڈوکیٹ.
‏1910:قانون ساز کونسل کے رکن بنے.
‏1912:مسلم لیگ کے سالانہ اجلاس کلکتہ میں شرکت کی.
‏1913:مسٹر گھوکلے کے ساتھ برطانیہ روانگی اور واپسی.
‏1913:مسلم لیگ میں شرکت کی.
‏1914:بحیثیت کانگریس کے رکن،برطانیہ روانہ ہوۓ.
1916:مسلم لیگ کے تاریخی اجلاس لکھنؤ کے صدر مقرر ہوے.
‏1918:شادی کی.
‏1918:لارڈ لنگرن کے خلاف مظاہرے کی رہنمائی کی.
‏1920:کانگریس سے علحیدگی اختیار کی.
‏1921:گاندھی کی حکمت عملی سے اختلافات.
‏1929:چودہ نکات کا اعلان.
‏1937:مسلمانوں کے نمائندے کی حیثیت میں گول میز کانفرنس میں شرکت.
‏1937:آل انڈیا مسلم اسٹوڈنٹس فیڈریشن کے پہلے اجلاس کی صدارت کی.
‏1938:کراچی مسلم لیگ کں صدارت.
‏1939:وائسراء کی خواہش پر یکم نومبر کو اس سے ملاقات.
‏1940:لاہور میں مسلم لیگ کے سالانہ اجلاس میں “قرارداد لاہور”منظور ہوئی.
اسی سال وکالت کو خیرباد کہا.
‏1944: 26 جولائی کو ایک خاکسار کا ان پر ناکام حملہ.
‏1945:اکتوبر میں بلوچستان کا دورا.
‏1946: 14 اگست لارڈ دیول کی طرف سے عبوری حکومت کا اعلان.
‏1946: دسمبر میں برطانوی حکومت کی دعوت پر لندن روانگی.
‏1947:مارچ میں لارڈ ماؤنٹ بیٹن کو وائسراء مقرر کیا گیا،اور قائد اعظم نے اس سے پاکستان کا مطالبہ کیا.
‏1947: 12 اپریل کو کانگریس کی طرف سے بنگال اور پنجاب کی تقسیم کا مطالبہ کیا.
‏1947: 3 جون کو مسلم لیگ کا اجلاس ہوا.
‏1947: 19 جون کو کراچی کو دارالحکومت بنانے کا فیصلہ.
‏1947: 4 جولائی کو دارالعوام میں قانون آزادی ہند کی منظوری.
‏1947: 11 اگست کو پاکستان کی مجلس دستورساز میں خطبہ استقبالیہ.
‏1947: 13 اگست لارڈ ماؤنٹ بیٹن کے اعزاز میں کراچی میں دعوت.
‏1947: 14 اگست قیام پاکستان.
‏1947: 18 اگست بحیثیت گورنر جنرل قوم کے نام عید کا پیغام.
‏1947: 24 اکتوبر عیدالاضحی کے موقع پر قوم کے نام پیغام..
‏1947: 30 اکتوبر پنجاب یونیورسٹی کے کھلے میدان میں قوم سے خطاب،مہاجرین کو صبر و ضبط کی ہدایت.
‏1948: 23 جنوری کو بحری ادارے”دلاور” کی رسم افتتاح.
‏1948: 11 ستمبر رات 9:45 کراچی میں بذریعہ ہوائی جہاز آمد،اسی شب کو رات 10:45 کو انتقال ہوا.

ایک سعودی تاجر کا بیان

ایک سعودی تاجر کا بیان ہے کہ میں اور میرا دوست سعود شہر بریدہ میں تجارت کرتے تھے۔ ایک دن میں جمعہ کی نماز کے لیے بریدہ کی مسجد الکبیر میں گیا ،نماز جمعہ کے بعد جنازہ کا اعلان ہوا، نماز جنازہ ادا کی گئی لوگوں نے ایک دوسرے سے پوچھنا شروع کر دیا کہ یہ جنازہ کس کا ہے، پتہ چلا کہ یہ جنازہ میرے ہی دوست سعود کا ہے جو گزشتہ رات ہارٹ اٹیک سے انتقال کر گیا تھا.

مجھے سُن کر انتہائی صدمہ پہنچا یہ سن 1998 یعنی کوئی 22 برس پہلے کی بات ہے، اس وقت ابھی موبائل فون عام نہیں ہوا تھا چند مہینے گزرنے کے بعد وہاں کے ایک دکاندار نے مجھ سے بات کی کہ مرحوم سعود کے ذمے میرے 3لاکھ ریال ہیں تو آپ میرے ساتھ چلیں ہم جا کر اس کے بیٹوں سے بات کریں اور یہ بات پہلے سے میرے علم میں تھی کہ سعود کے ذمہ یہ قرض ھے۔

چنانچہ ہم مرحوم کے بیٹوں سے جا کر ملے بات چیت ہوئی تو انہوں نے بغیر کسی ٹھوس ثبوت کے رقم لوٹانے سے صاف انکار کردیا ۔ اور کہا کہ ہمارے باپ نے تو صرف 6لاکھ ریال چھوڑا ہے اگر 3لاکھ ہم آپ کو دیتے ہیں تو پھر ہمارے پاس کیا بچے گا اس دور میں بہت سا لین دین باہم اعتماد پر ہوتا تھا چنانچہ ہم واپس آ گئے یوں وقت گزرتا گیا لیکن ہر وقت مجھے سعود کی یاد ستاتی رہی یہی سوچتا رہا کہ نہ جانے قرض نہ چکانے کی وجہ سے قبر میں اس کے ساتھ کیا بیت رہی ہو گی” ایک دن میں نے اپنے پیارے دوست کا قرض اتارنے کا عزم کر لیا اس ارادے کے بعد پھر مجھے دو دن تک نیند نہیں آئی جب بھی میں سونے کے لئے آنکھیں بند کرتا تو سعود کا مسکراتا چہرا میرے سامنے آ جاتا ،گویا وہ میری مدد کا منتظر ہو تیسرے دن میں نے اپنے عزم کو عملی جامہ پہناتے ہوے اپنی دکان سامان سمیت فروخت کر دی، اور دیگر جمع پونجی اکٹھی کی تو میرے پاس 4 لاکھ پچاس ہزار ریال جمع ہو گئے تو فورا 3 لاکھ ریال سے دوست کا قرض ادا کیا

۔جس سے مجھے دلی سکون ملا اس ادائیگی کے 2 ہفتے بعد وہی شخص جس کو میں نے 3 لاکھ ادا کئے تھے میرے پاس آیا اور کہنے لگا کہ مجھے پتا چلا ہے کہ آپ نے اپنا سب کچھ بیچ کر یہ پیمنٹ کی ہے ۔

لہذا میں 1 لاکھ ریال سے دستبردار ہوتا ہوں، یہ کہ کر اس نے 1 لاکھ ریال مجھے واپس کر دیا اور مارکیٹ میں دوسرے تاجروں کے ساتھ بھی اس واقعہ کا تذکرہ کیا کہ مخلص دوست نے کمال کی مثال قائم کر دی ہے چند دن گزرے کہ ایک تاجر کا فون آیا اسنے پیشکش کی کہ میرے پاس دو دکانوں پر مشتمل ایک سٹور ہے جو میں آپ کو بلا معاوضہ دینا چاہتا ہوں میں نے اس کی پیشکش کو قبول کیا مزدور لگا کر دکانوں کی صفائی کی اسی دوران سامان سے لدا ہوا ایک بڑا ٹرک دکانوں کے سامنے آ کر رکا جس میں سے ایک نوجوان نیچے اترا سلام کے بعد کہنے لگا کہ میں فلاں تاجر کا بیٹا ہوں۔

یہ سامان میرے ابا جان نے بھیجا ہے اور کہا ہے کہ سامان بیچ کر اس کی نصف قیمت آپ ہمیں لوٹا دینا اور باقی آدھا مال ھماری طرف سے تحفہ ہے اور آئندہ جتنے مال کی ضرورت ہو ہم سے ادھار لے کر فروخت کر کے پیمنٹ کر دیا کریں لوگ جنہیں میں جانتا نہیں تھا ۔

چاروں طرف سے میرے ساتھ تعاون کے لئے اُٹھ کھڑے ہوئے اور تھوڑے ہی عرصے میں میرا بزنس پہلے سے دگنا ہو گیا المختصر 1436ھ کے رمضان المبارک میں، میں نے 3 ملین ریال اپنے مال کی زکوٰۃ ادا کی ہے!! يہ كوئی افسانہ نہیں بلکہ حقیقی واقعہ ہے.,.

۔
سیدِ کائنات رحمۃ اللعالمین صلی اللہ علیہ والہ وسلم کا فرمان گرامی کس قدر سچا ھے کہ جب تک بندہ اپنے بھائی کی مدد میں لگا رھتا ھے اللہ تعالٰی بھی اس کی مدد کرتا

رھتا ھے #مُخْـــتَصَـرپُــراَثَـــر

Cellular service partially suspended for two days in Lahore

Cellular service to remain partially suspended in some areas of Lahore for two days (Monday and Tuesday) in view of security concerns on the occasion of Urs celebrations of Hazrat Data Ganj Bakhsh (RA)

The three-day 978th Urs celebrations of great saint Syed Ali Abul Hasan bin Usman Hajveri, popularly known as Hazrat Data Ganj Bakhsh (RA), began in Lahore on Sunday.

The decision to partially suspend mobile phone service in the city was taken by the Punjab Home Department during a meeting. The decision was taken at the request of Lahore police.

Punjab Minister for Auqaf and Religious Affairs, Pir Syed Saeed-ul-Hassan inaugurated the Urs celebrations by laying a traditional chaadar and floral wreath on the grave of the Sufi saint.

Speaking on this occasion, the Minister underlined the need for promoting teachings of Hazrat Data Ganj Bakhsh (RA) and other saints to eliminate intolerance and extremism from the society.

+933008998805

Saudi Arabia Announces 600 Fully-Funded Scholarships For Pakistani Students

Procedure to apply for scholarship

  • Students have to directly apply on the university’s website/online portal.
  • Each university has its own eligibility criteria and application time frame, students need to consult the website for the eligibility criteria of each discipline/course/university.
  • These scholarships are offered for almost all disciplines: Political Science, Law, Education, Administration, Economics, Engineering, Computer Science, Agriculture, Arabic/Islamic Studies and Media Sciences.
  • The Scholarships are offered at diploma, Bachelor’s, Master’s, and PhD levels.
  • These scholarships are offered by 25 universities in the kingdom as given in Annex-A.
  • Each university is authorised to enroll only 5% of international students except Princess Noora Binte Abdul Rehman University for Girls, Riyadh, and Jamia Islamia Madina Munawara. The admissions percentage of Princess Noora Binte Abdul Rehman University for Girls, Riyadh on scholarship is 8 %, whereas Jamia Islamia Madina Munawara grants admissions on scholarship 85 % of total seats.
  • Universities will forward the application to the Saudi Ministry of Education which decides the final award of eligible applicants.
  • Applicants should share a copy of the submitted application on the official email of the Embassy of Pakistan, Riyadh Parepriyadh@mofa.gov.pk. Subsequently, the Embassy shall follow up with the Saudi Ministry of Education for grant of scholarships.

Eligibility criteria

  • Applicant must be a Pakistani or Azad Jammu and Kashmir national.
  • 75% of students will be awarded scholarships from Pakistan, whereas 25% of scholarships will be given to Pakistani students residing in the kingdom.
  • Men and women, both, can apply for these scholarships.
  • The applicant should be between 17 years to 25 years for Bachelor’s programme, must be of 30 years age for Master’s programme and less than 35 years for PhD programme on the closing date of the application process.
  • The selected applicants will commence the programme in September/October each year in Saudi Arabia.
  • The applicant must not be holding any other scholarship at the time of availing of Saudi scholarship.
  • The applicant must not have any criminal record.
  • The applicant must not have been suspended from any educational institution on disciplinary or any other valid ground.

Benefits of scholarship

  • The scholarship covers free lodging.
  • 3 months furnishing allowance on arrival in KSA for married scholars.
  • Return air tickets.
  • Free medical for the student and his/her family, if married.
  • 3 months graduation allowance for shipment of books.
  • Subsided meal at the campus.
  • Sports and recreational activities on the campus, support for dependents and travel expenses.
  • A monthly allowance of 900 Saudi Riyal (SR) will be given to science students and 850 SR to humanities students

Prime Minister Imran Khan

Prime Minister Imran Khan Friday appreciated diligent efforts of Pakistan’s premier intelligence agency, the Inter-Services Intelligence (ISI), for national security and expressed his satisfaction over professional preparedness.

The Prime Minister expressed these views while addressing a briefing during his visit to the Inter-Services Intelligence Secretariat, says a press release issued by the Prime Minister’s Office (PMO) following the meeting. It said that a comprehensive briefing was given to the national and military leadership on the national security and regional dynamics with focus on ongoing situation in Afghanistan.

The Prime Minister along with key federal ministers, chief ministers of Balochistan and Khyber Pakhtunkhwa visited the ISI Secretariat. Chief of Army Staff (COAS) General Qamar Javed Bajwa, Chief of Naval Staff Admiral Muhammad Amjad Khan Niazi and Chief of Air Staff Air Chief Marshal Zaheer Ahmad Babar were also present, according to the officials.Earlier, Director General Inter-Services Intelligence Lieutenant General Faiz Hameed welcomed the dignitaries upon their arrival at the secretariat.

Friday’s huddle of top civil and military leadership at ISI Secretariat follows another such meeting in May when Prime Minister and General Qamar visited the ISI headquarters and received a comprehensive briefing. President Dr. Arif Alvi visited the ISI headquarters in July and received a briefing on national security dynamics including the situation in Afghanistan.

(بائیس ستمبر یوم وفات امام مودودی رحمہ اللہ )

(بائیس ستمبر یوم وفات امام مودودی رحمہ اللہ )

جب ایک جدید تعلیم یافتہ قانون دان نے سب کو رُلا دیا…

یہ فلیٹیز ہوٹل کا لان تھا، 1973ء کا سال تھا. سٹیج پر بس چار ہی شخصیات براجمان تھیں. ان میں وزیر قانون جناب اے.کے بروہی، دیوبند کے جیّد عالم جناب مولانا محمد چراغ، سرحد کے نامور عالم دین مولانا سیاح الدین کاکاخیل اور جناب سید ابوالاعلیٰ مودودی صاحب تشریف فرما تھے.

یہ تفہیم القرآن کی تکمیل کے موقع پر منعقد کی جانے والی تقریب تھی. شدید گرمی کا موسم تھا، منتظمین نے پنکھوں کا انتظام کر رکھا تھا لیکن حبس کی شدت کے آگے وہ پنکھے ناکافی محسوس ہو رہے تھے.

کشادہ شامیانہ بھی تنگی داماں کی شکایت کر رہا تھا. لوگ شامیانے سے باہر دھوپ میں کھڑے مقررین کی گفتگو سن رہے تھے. پسینہ ایسے بہہ رہا تھا گویا جسم کی قید سے نکلنے کو بیتاب ہو…

مولانا سیاح الدین کاکاخیل نے نہایت نفاست سے گفتگو فرمائی اور مولانا کی تفسیری خدمات کو سراہا. پھر دیوبند کے نامور عالم جناب مولانا محمد چراغ کی باری آئی، فرمانے لگے،
“میں اپنے پس منظر کے سبب سید مودودی کی تحریک کے خلاف تھا، لیکن پھر ایک خواب نے میری کایا پلٹ دی، دیکھتا ہوں کہ بادشاہی مسجد زمیں بوس ہو چکی ہے اور ایک اکیلا فرد تن تنہا اس کی بنیادوں کو کھڑا کر رہا ہے. میں اس فرد کے قریب پہنچا تو وہ سید مودودی رحمۃاللہ علیہ تھے. میں نے ان سے کہا کہ آپ اکیلے کیسے اس مسجد کو مکمل کریں گے. سید نے جواب دیا کہ میں تعمیر پر معمور کیا گیا ہوں، مجھے اس سے غرض نہیں کہ عمارت کب مکمل ہو گی.

مولانا چراغ کہتے ہیں میں نیند سے بیدار ہوا تو سیدھا سید کے پاس چلا آیا اور تعمیر کے کام میں اپنی خدمات کو وقف کر دیا کہ اب مرتے دم تک یہی تحریک میرا اوڑھنا بچھونا ہے.

ان کے بعد جناب اے کے بروہی مائیک پر تشریف لائے. اپنی کتھا کچھ یوں بیان کی.

“حضرات میں ایک بیرونی تعلیم یافتہ قانون دان ہوں. میں نے قانون کے مضامین کو اس کی جڑوں سے سمجھا ہے. میں نے سید مودودی کا بیان سنا تھا کہ قرآن کو اسلامی دستور کا حصہ بنایا جائے. میں نے اعلان کیا کہ کوئی قرآن کو قانون کی کتاب ثابت کر دے تو میں اسے 5ہزار روپے انعام دوں گا. غلام ملک صاحب نے سید کی تحریروں کے زریعے مجھ پر یہ بات عیاں کر دی کہ دراصل قرآن ہی رہتی دنیا کے لیے حقیقی قانون کی کتاب ہے.

اے کے بروہی آبدیدہ ہو کر کہنے لگے:
“مرنے کے بعد خدا مجھ سے پوچھے گا کہ کیا نیک عمل ساتھ لائے ہو تو کہوں گا سید مودودی کی رفاقت لیکر آیا ہوں.

یہ سن کر مجمع پر بھی رقت طاری ہو گئی.

اسی دوران اچانک سے کچھ بادل نمودار ہوئے اور سورج کو ڈھانپ لیا. گویا اس پاکیزہ محفل کو ابر رحمت نے ڈھک لیا ہو اور بارش کے کچھ موٹے موٹے قطرے سامعین پر برسے اور پھر بارش تھم گئی. شامیانے کے باہر والے افراد بارش میں بھیگ گئے.

اس ہلکی سی رم جھم نے سامعین کو سکون اور اطمینان بخشا اور سید مودودی کی جامع اختتامی گفتگو کے بعد تقریب اختتام پذیر ہو گئی.
Shahid Siddique

ssiddique560@gmail.com

How CO2 Saves the Earth: Greenhouse Gas have Vital Warming & Cooling Effects

Jim Steele While CO2 warming effects have raised earth’s temperature to present levels, CO2’s absorbed wavelengths are saturated. More CO2 will have reduced warming effects going forward. On the other…

How CO2 Saves the Earth: Greenhouse Gas have Vital Warming & Cooling Effects

Education Update

*ایک ہفتہ کورونا کے باعث لاک ڈاؤن لگا۔ تعلیمی ادارے بند ہوئے۔*
*اور پھر وفاقی وزیرتعلیم نے میٹرک اور انٹر کے طلبہ کو پاس کرکے۔۔ سپلی ختم کرنے اور سال میں دو سالانہ امتحان لینے کا اعلان کردیا*۔

*کورونا لاک ڈاؤن کے باعث اس سارے عمل کو بڑی آسانی سے ہضم کرلیا گیا۔*
*لیکن یہ دراصل ایجوکیشن سسٹم کی تبدیلی کا وہ مرحلہ تھا جسے 2025 کے بعد آنا تھا۔*
*عوام اور تعلیمی اداروں کو راضی کرنا تھا۔ مگر حکومت نے ابھی اسے آسانی کے ساتھ نہ صرف لاگو لاگو کردیا۔ بلکہ عوام نے بھی مان لیا۔*

*یہ سسٹم دراصل میٹرک اور انٹر کو اکٹھا کر ایک چار سالہ ایجوکیشن سسٹم کرنے کی طرف ابتدائی قدم ہے۔ جس کو مکمل کرنے کی مدت2025 سے 2033 تک کی تھی۔*
*جیسے دو سالہ گریجویشن اور دو سالہ ماسٹرز کو ختم کرکے ایک بی ایس کی چار سالہ سمیسٹر وائز ڈگری لائی گئی ہے۔*
*ایسے ہی میٹرک اور انٹر کو اکٹھا کرکے ان کی جگہ چار سالہ ڈگری سمیسٹر وائز کرکے لانچ کی جانی ہے۔ جس کا نام میٹرک ہوگا۔ سٹوڈنٹ مڈل کے بعد گروپ کا انتخاب کرکے میٹرک میں داخل ہوگا۔ بی ایس کے لیے ایچ ای سی کا مشکل ترین ٹیسٹ پاس کرکے چند سٹوڈنٹس بی ایس میں I جائیں گے۔*
*اور*
*بی ایس کی چھلنی سے گزرنے والے پی ایچ ڈی کی طرف جانے سے پہلے یوگیٹ کے نام پر چھلنی دے گزریں گے۔ اور بمشکل چند ہی طلبہ پی ایچ ڈی کرسکیں گے۔*

یہ نظام تعلیم مکمل نافذ ہونے کے بعد ایجوکیشن سسٹم میں۔۔۔مڈل کے بعد
میٹرک (چار سالہ) ،
گریجویشن (چار سالہ)
اور
پی ایچ ڈی (کم از کم دو سالہ زیادہ سے زیادہ پانچ سالہ)
کا ایجوکیشن سسٹم بن جائے گا۔
پی ایچ ڈی کے بعد بھی کسی کی پسلی ہوئی تو وہ ڈی لیٹ کرسکتا ہے۔
ایم بی بی ایس کے بجائے ہیلتھ سائنسز کو آگے لایا جائے گا۔ جس میں ہر طالب علم جاسکے گا۔ اور یہ سادہ بی ایس کے برابر ہوگی۔
انجئیرنگ کے لیے تو بی ایس کی ڈگری ہی اب جاری ہورہی ہے۔ جو ایکویلینس میں سادہ بی ایس کے برابر ہے۔

اس سسٹم کے فوائد تو ہیں کہ۔۔۔
طلبہ کو کوالٹی ایجوکیشن میسر آئے گی۔
معاشرے میں مفید علوم شامل نصاب ہوں گے۔
ایجوکیٹڈ افراد کم مگر بہترین ہوں گے
تو دوسری طرف
اس کا بڑا نقصان یہ ہے کہ
کم طلبہ تعلیم حاصل کرسکیں گے۔
کم طلبہ آگے آئیں گے۔
بہت تھوڑے طلبہ ہی پاس ہوکر نوکریوں کی کوشش کریں گے۔
حکومت کے لیے بےروزگاری کی ٹینشن بھی ختم ہو جائے گی۔ کہ اکثریت نوکریوں کی اہل ہی نہیں رہے گی۔

مڈل کے بعد فی سمیسٹر بیس بیس ، تیس تیس ہزار دینا غریب کے بس کی بات قطعاً نہیں۔
اس لیے غریب کا بچہ مڈل سے آگے نہیں پڑھ پائے گا۔

یوں۔۔۔
ملک میں تعلیمی نظام ایک بار پھر مشرف دور سے پہلے والے معیار یعنی انڈر میٹرک تک پہنچ جائے گا۔

دوسری طرف دینی مدارس کے طلبہ کی ایکویلینس بھی ایک بہت بڑے بحران کا شکار ہو جائے گی۔
آخری ڈگری جس سند کے برابر ہے۔ وہی ختم۔۔۔ تو پھر ایکویلینس کس کے برابر؟
پہلے چھے درجات کی ایکویلینس پہلے سے ہی نہیں ہورہی۔۔۔
سمیسٹر سسٹم کے لازمی مضامین نہ پڑھانے کے باعث ایکویلینس ملے گی نہیں۔
آج الحاق الحاق کھیلنے والے دینی مدارس کے امتحانی بورڈز بس چند سال میں ہی آٹومیٹک طریقے سے بےاثر ہونے والے ہیں۔
مگر جاگنا انہوں نے ابھی نہیں۔۔۔ کہ۔۔
ابھی ایک دوسرے کو آپس میں سبق سکھانا ۔۔۔اہم ترین”۔۔۔ کام ہے۔
رہ گئی ایکویلینس اور ڈگری۔۔۔ تو یہ طلبہ کا مسئلہ ہے۔ وہ تب دیکھا جائے گا جب پیدا ہوگا۔
Muhammad Shahid Siddique

اللّه میرے ملک کی حفاظت کرے

چار دن اس خوشی میں ناچتے رہے کہ ہم نے امریکہ کو ہرا دیا ہے

اگلے چار دن اس خوشی میں ناچتے رہے کہ طالع بان کی حکومت آگئی ہے لبرلز کی پھٹ گئی ہے اسلامی نظام آرہے ہے

رولا امریکہ افغانستان کا تھا اڑتا تیر پکڑ کہ ہم نے لے لیا ہے ، ایک دوست (کل تعلیم آئ سی ایس) بغیر بلائے چائے پینے پہنچ گیا

کچھ دن پہلے جو کہ رہے تھے ہم نے امریکہ کا الائنس ہو کہ اسکو ہی شکست دی آج انگلینڈ اور نیوز ی لینڈ کہ دورے کی منسوخی کہ بعد کہ رہے ہیں بھارت نے سازش کی مطلب تم لوگ کرو تو انٹلیجنس کوئی اور کرے تو سازش اب برداشت کریں دوسروں کی سازش.

Muhammad Shahid Siddique

+923008998805

عمران خان! اس آگ سے مت کھیلو

عمران خان! اس آگ سے مت کھیلو






سیکولر اور لبرل لابی کی سندھ اسمبلی میں مذہب کی تبدیلی کے بل پر ذِلّت آمیز ناکامی کے بعد اب ان کی پناہ گاہ اور ٹھکانہ شیریں مزاری کی وزارتِ انسانی حقوق بن گئی۔ پاکستان کو بدنام کرنے کی ایسی تمام کوششیں ضائع ہو رہی تھیں، جو میڈیا میں بیٹھے ہوئے سیکولر، لبرل گماشتوں نے چند ایک جھوٹے مقدمات تراش کر پھر انہیں خبروں کی مین ہیڈ لائن بنا کر ایسا تاثر قائم کرنے کی کوشش کی تھی کہ جیسے پاکستان میں مسلمان بندوقیں اُٹھائے چاروں جانب گھوم رہے ہیں اور ہندوئوں کو پکڑ پکڑ کر مسلمان بنا رہے ہیں۔ وہ الزام جو کبھی برِصغیر پاک و ہند میں مسلمانوں کی آٹھ سو سالہ حکمرانی کی تاریخ میں متعصب ترین اسلام دُشمنوں نے بھی نہیں لگایا تھا، پاکستان کے سیکولر، لبرل، بددیانت طبقے نے عالمی اور بھارتی ایجنڈے اور خاص طور اپنے خبث ِباطن کے طور پر میڈیا کی حد تک لگا دیا۔ یہی وجہ ہے کہ شیریں مزاری کی انسانی حقوق کی وزارت کے ایماء پر سندھ اسمبلی میں اس بل کی نامنظوری کے صرف چالیس دن کے اندر ایک پارلیمانی کمیٹی بنائی گئی جس کے نام میں خاص طور پر ’’جبری مذہب کی تبدیلی‘‘ (Forced Conversion) شامل کیا گیا تاکہ دُنیا کو یہ تاثر پہنچایا جائے کہ یہ پاکستان میں ایک بہت بڑا مسئلہ ہے۔ کیا کبھی صحت کی کمیٹی کا نام ’’بیماریوں کی کمیٹی‘‘ یا خوراک کی کمیٹی کا نام ’’بھوک‘‘ کی کمیٹی رکھا گیا۔ مذہبی آزادی کی کمیٹی کا ایسا نام کیوں رکھا گیا۔ اس لئے کہ دیگر کمیٹیوں میں بدنام کرنے کا مقصد پوشیدہ نہیں ہوتا جبکہ یہاں تو پوری کی پوری نیت ہی فتور سے بھر پور تھی۔ پُھرتیاں ملاحظہ فرمائیں، اس کمیٹی نے سات دن کے اندر 28 نومبر 2019ء کو ہی اپنی پہلی میٹنگ بلائی اور پھر پے در پے آٹھ میٹنگ کر کے صرف ایک سال دو ماہ بعد 16 فروری 2021ء کو اپنی رپورٹ جمع کرا دی۔ 16 نومبر 2021ء کو ہونے والی نویں میٹنگ میں کمیٹی کے سامنے یہ ’’متنازعہ ڈرافٹ بل‘‘ لایا گیا جس کا عنوان تھا “The Prohibition of Forced Conversion Bill 2021” ’’جبری تبدیلیٔ مذہب کا امتناعی قانونی بل 2021‘‘ ۔کمیٹی نے متفقہ طور پر کہا کہ شیریں مزاری کی وزارت نے تو سندھ اسمبلی کے مسترد کردہ بل کو ہی نقل کر کے بھیج دیا ہے۔ حالانکہ اس پر پاکستان کے ہر طبقے نے اعتراضات کئے تھے۔ کمیٹی نے یہ بل واپس کیا اور پانچ دن کے اندر دوسرا بل پیش کرنے کو کہا گیا۔ اگلی میٹنگ 8 فروری 2021ء کو منعقد ہوئی اور ڈھٹائی کا عالم یہ تھا کہ اسی بل کو چند الفاظ اور فل سٹاپ ’’کامے‘‘ بدل کر دوبارہ پیش کر دیا گیا۔ اس ڈھیٹ پن کے جواب میں کمیٹی نے بل کو دوبارہ وزارتِ انسانی حقوق کو بھیجا اور ساتھ لکھا “for further insight” یعنی ’’مزید بصیرت کیلئے‘‘۔ لیکن کمیٹی کو کیا علم کہ جہاں سیکولر، لبرل تعصب ہو وہاں ’’بصیرت‘‘ غائب ہو جاتی ہے۔ اس رپورٹ کے بعد یہ کمیٹی اپنی مدت پوری کر کے ختم ہو گئی اور سینیٹر لیاقت علی خان ترکئی کی سربراہی میں نئی کمیٹی بنا دی گئی ، لیکن کمیٹی کا نام وہی رہا۔ حیرت ہے کہ ان تمام ممبرانِ اسمبلی اور اراکینِ سینٹ کو اس نام پر کبھی کوئی ’’حیرانی‘‘ نہیں ہوئی۔ نئی کمیٹی کا ایک اجلاس 30 جولائی 2021ء کو منعقد ہوا جس میں موصوفہ شیریں مزاری اور مذہبی اُمور کے وزیر نورالحق قادری نے بھی شرکت کی۔ اس میٹنگ میں یہ ’’متنازعہ بل‘‘ پیش ہوا اور تین ممبران لال چند، جے پرکاش اور رمیش کمار نے زور دیا کہ اس بل کو فوری طور پر اسمبلی میں پیش کیا جائے۔ اقلیتی کمیشن کے اراکین نے کہا کہ ہمیں اٹھارہ سال سے کم عمر میں اسلام قبول کرنے پر سخت اعتراضات ہیں کیونکہ ایسا ہوا تو پھر یہ فوراً شادی پر منتج ہو جایا کرے گا۔ بل کے بارے میں وزیر مذہبی اُمور نورالحق قادری نے کہا کہ یہ ایک ’’حساس‘‘ مسئلہ ہے اس لئے اس پر اتفاقِ رائے ضروری ہے۔ چیئرمین کمیٹی نے بل کو وزارتِ مذہبی اُمور کو بھجوا دیا تاکہ وہ اس کا بغور جائزہ لے۔ اس کمیٹی کے اجلاس کے پانچ دن بعد 4 اگست 2021ء کو کمیٹی کے اراکین کو ایک مراسلے کے ساتھ وہی پرانا جبری تبدیلی کی روک تھام والا بل بھیجا گیا جس کے بارے میں کمیٹی کہہ چکی تھی کہ یہ سندھ حکومت کے مسترد شدہ بل کا چرپہ اور نقل ہے۔ مراسلے کے اوپر والے کونے میں لکھا ہوا ہے “immediate” یعنی ’’فوراً‘‘ اور “By Special Messenger”یعنی ’’مخصوص ڈاک لے جانے والے کے ذریعے‘‘ گویا یہ بل کمیٹی میں اجتماعی طور پر پیش کرنے کی جرأت نہ ہوئی، بلکہ تمام ممبران کو علیحدہ علیحدہ ان کے گھروں اور دفاتر میں تقسیم کیا گیا۔ عمران خان صاحب کی وزارتی ٹیم کے کچھ ’’اعلیٰ دماغ‘‘ اراکین کو ایسے معاملات میں بہت جلدی بھی ہوتی ہے مگر وہ عوامی ردِعمل کے خوف سے اپنی اس حرکت کو خفیہ بھی رکھنا چاہتے ہیں۔ سندھ اسمبلی میں سرِعام مسترد کردہ بل کو دوبارہ منظور کروانے اور وہ بھی اسے قومی سطح پر قانون کا درجہ دلوانے کی سازش انہی وزیروں کے دماغ کا نفرت انگیز ’’پھوڑا‘‘ تھا، ورنہ سندھ میں زرداری، بلاول بھٹو، شیری رحمان اور رضا ربانی جیسے سیکولر، لبرل سیاسی رہنمائوں کا اس معاملے میں حشر دیکھ کر بھی یہ وزراء اگر مخلص ہوتے تو کبھی بھی عمران خان کو اس آگ میں کودنے کا مشورہ نہ دیتے۔ لیکن ان کا تو ایجنڈا ہی اور ہے۔ یوں لگتا ہے انہوں نے عمران خان کو عوامی سطح پر ذلیل و رُسوا کرنے کا پورا بندوبست کر رکھا ہے۔ اس بل کا آغاز ایک جھوٹ پر مبنی فقرے سے ہوتا ہے۔ “The Government of Pakistan is obligated to fulfill its commitment under international convention on civil and political rights and International convention of Economic culture and social rights” ’’حکومت پاکستان کی ذمہ داری ہے کہ وہ عالمی کنونشن برائے سول اور سیاسی حقوق اور عالمی کنونشن برائے معاشی و معاشرتی اور سوشل حقوق کی پاسداری کرے‘‘۔ وزارتِ قانون اور وزارتِ انسانی حقوق کی ’’جہالت‘‘ کا عالم یہ ہے کہ یہ دونوں “Convention” نہیں بلکہ “Covenant” یعنی ’’عہد نامہ‘‘ ہیں۔ یہ دونوں عہد نامے 16 دسمبر 1966ء کو اقوامِ متحدہ کے اجلاس میں منظور ہوئے۔ ان دونوں میں کسی آرٹیکل میں کہیں یہ درج نہیں کہ کس عمر سے پہلے آپ مذہب تبدیل نہیں کر سکتے، بلکہ ایسے معاملات کا ذکر تک نہیں ہے۔ لیکن اسی جھوٹی وجۂ تسمیہ کی بنیاد پر اس بل کی شق نمبر (2)5 کے تحت اگر کوئی اٹھارہ سال سے کم عمر لڑکا یا لڑکی اسلام قبول کرتا ہے تو قانون اسے مسلمان تسلیم نہیں کرے گا۔ ان دونوں ’’عہد ناموں‘‘ پر یورپ اور امریکہ جیسے لاتعداد ممالک نے بھی دستخط کئے ہیں۔ ان میں سے کسی ایک ملک میں بھی ایسا قانون نہیں ہے کہ کوئی لڑکا یا لڑکی اٹھارہ سال سے پہلے مذہب تبدیل نہیں کر سکتے۔ شاید ان عالمی ’’عہد ناموں‘‘ کی ’’انگریزی‘‘ کی خصوصی سمجھ صرف شیریں مزاری کی وزارتِ انسانی حقوق کی حاصل ہے۔ ان سیکولر، لبرل حضرات کی مہربانی ہے کہ آج اس اسلامی ملک میں ایک اٹھارہ سال سے کم عمر لڑکی یا لڑکے کو گھر سے بھاگنے کی تو اجازت ہے، اسے والدین کی بجائے دارالامان بھیجا جاتا ہے لیکن مسلمان ہونے والے لڑکے یا لڑکی کو اس قانون کے مطابق واپس ’’پنڈتوں‘‘ کے حوالے کیا جائے گا جو اسے پھر ہندو ہونے پر قائل کریں گے۔ بل چونکہ اب وزارتِ مذہبی اُمور کے پاس ہے۔ اس لئے ان کی سفارشات کا انتظار رہے گا۔ لیکن ایسی ہی خاموشی، راز داری اور سازش سے پہلے خواجہ سرائوں کے نام پر ’’ہم جنس پرستی‘‘ کی سرپرستی کا بل منظور کروایا گیا، ’’گھریلو تشدد‘‘ کا بل پیش کیا گیا، تجربے کی بنیاد پر خوف یہی ہے کہ اس بل کے ساتھ بھی کہیں ایسا نہ ہو جائے۔ لیکن ایسا کرنے سے یہ وزراء حضرات پاکستان کے اسلامی تشخص کا کچھ نہیں بگاڑ سکیں گے، البتہ عمران خان کے عوامی مستقبل کو مکمل تاریک ضرور کر دیں گے۔ خان صاحب !آپ کی وزارت میں چار وزراء ایسے ہیں، کہ اگر وہ اپنی سازشوں میں کامیاب ہو گئے تو آپ اور آپ کے اُمیدواران اگلے الیکشنوں میں عوامی اجتماعات منعقد کروانا تو دُور کی بات ہے، لوگوں کا سامنا تک نہیں کر سکیں گے۔ اس چار کے ٹولے کو آپ بخوبی جانتے ہیں۔(ختم شد)
*What’sApp*
+923008998805

کسی نے صحیح کہا تھا*تعریف وہ جو دشمن کرے

کسی نے صحیح کہا تھا🤔
تعریف وہ جو دشمن کرے

اتنا تو انڈیا کی عوام بھوک سے نہیں مرتے ہونگے جیتا ان کا میڈیا ان کو پاکستان افواج
اور آئی ایس آئی کا بتا کر دن میں تین وقت کھانا کھلا کر مار دیتا ہیں۔۔۔
آخر سمجھ میں یہ نہیں آتا کہ بھارتی میڈیا نیوز چینلوں کو کہ صبح کے ناشتے میں آئی ایس آئی چائے پیش کرتی ہے یہ دوپہر کا لنچ کسی آئی ایس آئی کی ہوٹل سے آتا ہے یہ رات کا کھانا کسی آئی ایس آئی پکوان سینٹر سے لے کر جاتے ہیں یہ انڈین میڈیا کے دو ٹکے کے للو۔
جو افواج پاکستان اور آئی ایس آئی کے تعریف کیےنہیں تھکتے اور ان کو ہر جگہ موت سے زیادہ آئی ایس آئی نظر آتی ہے🇵🇰💪
*بھارتى عوام کو انڈين ميڈيا کى چال بازى اور چول مارنے کى سمجھ آنے لگى ۂے💥
*ايک بھارتى شۂرى نے سارى دنيا کے سامنے انڈين ميڈيا کا سرۓعام بھانڈا پھوڑ دي.

Muhammad Shahid Siddique ssiddique560@gmail.com Whatapp +923008998805

*کسی نے صحیح کہا تھا🤔**تعریف وہ جو دشمن کرے*اتنا تو انڈیا کی عوام بھوک سے نہیں مرتے ہونگے جیتا ان کا میڈیا ان کو پاکستان افواج اور آئی ایس آئی کا بتا کر دن میں تین وقت کھانا کھلا کر مار دیتا ہیں۔۔۔آخر سمجھ میں یہ نہیں آتا کہ بھارتی میڈیا نیوز چینلوں کو کہ صبح کے ناشتے میں آئی ایس آئی چائے پیش کرتی ہے یہ دوپہر کا لنچ کسی آئی ایس آئی کی ہوٹل سے آتا ہے یہ رات کا کھانا کسی آئی ایس آئی پکوان سینٹر سے لے کر جاتے ہیں یہ انڈین میڈیا کے دو ٹکے کے للو۔جو افواج پاکستان اور آئی ایس آئی کے تعریف کیےنہیں تھکتے اور ان کو ہر جگہ موت سے زیادہ آئی ایس آئی نظر آتی ہے🇵🇰💪*بھارتى عوام کو انڈين ميڈيا کى چال بازى اور چول مارنے کى سمجھ آنے لگى ۂے💥*ايک بھارتى شۂرى نے سارى دنيا کے سامنے انڈين ميڈيا کا سرۓعام بھانڈا پھوڑ ديا😂😋🤣😂😋🤣Muhammad Shahid ssiddique560@gmail.com Whatapp +923008998805

اشفاق احمد کہتے

اشفاق احمد کہتے ہیں جس پہ کرم ہے، اُس سے کبھی پنگا نہ لینا۔ وہ تو کرم پہ چل رہا ہے۔ تم چلتی مشین میں ہاتھ دو گے، اُڑ جاؤ گے۔
کرم کا فارمولا تو کوئی نہیں ۔اُس کرم کی وجہ ڈھونڈو۔
جہاں تک میرا مشاہدہ ہے، جب بھی کوئی ایسا شخص دیکھا جس پر ربّ کا کرم تھا، اُسے عاجز پایا۔
پوری عقل کے باوجود بس سیدھا سا بندہ۔
بہت تیزی نہیں دکھائے گا۔
اُلجھائے گا نہیں۔
رستہ دے دے گا۔
بہت زیادہ غصّہ نہیں کرے گا۔
سادہ بات کرے گا۔
میں نے ہر کرم ہوئے شخص کو مخلص دیکھا ـــ اخلاص والا۔۔۔ غلطی کو مان جاتا ہے۔ معذرت کر لیتا ہے۔ سرنڈر کردیتا ہے۔
*جس پر کرم ہوا ہے ناں، میں نے اُسے دوسروں کے لئے فائدہ مند دیکھا۔*
یہ ہو ہی نہیں سکتا کہ آپ کی ذات سے نفع ہو رہا ہو، اور اللہ آپ کے لئے کشادگی کو روک دے؛ وہ اور کرم کرے گا۔
میں نے ہر صاحبِ کرم کو احسان کرتے دیکھا ہے۔
حق سے زیادہ دیتا ہے۔
اُس کا درجن 13 کا ہوتا ہے، 12 کا نہیں۔
اللہ کے کرم کے پہیے کو چلانے کے لئے آپ بھی درجن 13 کا کرو اپنی زندگی میں۔
حساب پہ چلو گے تو حساب ہی چلے گا
دل کے کنجوس کے لئے کائنات بھی کنجوس ہے۔
دل کے سخی کے لئے کائنات خزانہ ہے۔
جب زندگی کے معاملات اَڑ جائیں؛ سمجھ جاؤ تم نے دوسروں کے معاملات اَڑاۓ ہوۓ ہیں۔
*آسانیاں دو؛ آسانیاں ملیں گی

Imran kham

‏عمران خان نے CNN کو انٹرویو نہیں۔پاکستانی عوام کا 70 سالوں سے امریکی بیوفائی اور دو نمبری کے خلاف ابلتا غصہ اینکر کے ذریعے امریکہ کے منہ پر مارا ہے۔ مرشد نے امریکی اوقات سے لیکر پاکستان کیساتھ کی جانے والی 2 نمبریوں پر تاک تاک کر نشانے لگائے ہیں۔ جب مرشد نے امریکہ ہمیں امداد دیکر اپنا زرخرید غلام سمجھنا شروع کردیتا ہے تو اینکر کیساتھ پاکستان کے اندر کئی خودساختہ لیڈران کے کانوں سے دھواں نکلا ہو گا۔ دنیا کے سامنے اتنا مدلل اور جرات مند موقف آجتک کسی نے بیان کیا اور خان کے علاوہ کوئی کر بھی نہیں سکتا ‏ خان صاحب پلیز تھوڑا فوکس مہنگائی پر کریں کیونکہ آپکے پاس قوم نہیں اپنے اپنے پیٹ کے لیے جینے والا جنگل ہے۔ مجھے خدشہ ہے آپ جیسا جرات مند لیڈر کہیں عوام کے بھوکے پیٹ کی نظر نا ہو جائے😢

پاکستان واقعی زرعی ملک ہے؟

پاکستان کی زراعت زوال پذیر کیوں؟

پاکستان زرعی ملک ہے اس خوشگمانی نے ہمیں بچپن سے ہی بے حد متاثر کر رکھا ہے .جس کا حقائق کی دنیا سے کوئی تعلق نہی ہے .اگر ہر ملک زرعی ہے تو ہم اناج اور دوسری اشیاء خوردنی مین خود کفیل کیوں نہی ہین گندم چینی دالیں خوردنی تیل درآمد کرنے کے باوجود ہم پھر بھی زرعی ملک ہیں .ہمارا اخلاقی معیار بہت نچلی سطح تک پہنچ چکا ہے کسی خالص چیز کس تلاش کرنا مشکل ترین کام ہے . ملک میں دودھ کے حالات سب سے پراگندہ ہین. کپاس کی پیدوار کے حوالے سے 2020تا 2021 کاشتکاروں کیلئے مشکل ترین سال ثابت ہوا ہے .اس سال گزشتہ سال کے مقابلے میں 60 فیصد کپاس کم ہوء ہے .ایک کروڑ دس لاکھ بیلز سے کم ہو کر صرف 56 لاکھ بیلز رہ گء ہین .جاری سال میں کپاس کی ہیدوار کا تخمینہ 70 لاکھ بیلز لگایا گیا ہے .جو ہماری ٹکسٹائل صنعت کی ضروریات کا 60 فیصد پورا کرتاہے .گزشتہ سال کپاس کی پیداوار 85 لاکھ بیلز ہوء تھیں .کپاس کی پیدوار میں کمی کی بے شمار وجوہات ہین .ہم کپاس کے بیجون کے معیار مین بہتری نہی لا سکے .. پاکستان مین تحقیقی ادارے سر پرستی سے محروم ہین ان کیلئے مناسب وسائل فراہم نہی کیے جاتے . Research and development کے ادارے خانہ پوری کرنے میں اپنا ثانی نپی رکھتے.مارکیٹ مین جعلی بیج ناقص ادویات اور درجہ حرارت میں تبدیلی امریکی سنڈی کا حملہ بھی شامل ہے. کپاس کہ کاشت کے علاقوں میں بارشوں کی بہتات بھی پیدوار کو متاثر کرتی ہے .چینی کی ملوں کے مالکان اقتدار کی بلند چوٹیوں پر بیٹھے ہین ہر سیاسی جماعت کی سیاست کا انحصار شوگرز مل اونرز پر ہے. مل مالکان کے اثر رسوخ نے بھی لوگون کو کپاس کاشت کرنے کی بجائے گنا کاشت کرنے ہر امادہ کیا ہے .اس طرح کپاس کی کاشت کے رقبے مین کمی واقع ہوئے ہے .اس طرح کپاس کی کاشت کا رقبہ 34 لاکھ ہیکٹر کی بجائے 22 لاکھ ہیکٹر رہ گیا ہے .گزرے ہوئے سالوں مین سب سے کم رقبہ ہے .موجودہ سال میں کپاس صرف 80 لاکھ ایکڑ پر کاشت کی گء ہے .جس مین پنجاب مین 62 لاکھ ایکڑ اور سندھ مین 18 لاکھ ایکڑ رقبہ شامل ہے . حکومت پاکستان نے 2015 کاٹن وزن کو متعارف کروایا تھا .جس مین کپاس کی پیدوار کا یدف 200 بیلز مقرر کیا گیا تھا. اگر بھارت کی زراعت کا جائزہ لیا جائے تو انہیوں نے بی ٹی کپاس کا بیج استعمال کیا ہے کپاس کی پیدوار 380 لاکھ بیلز ہو چکی ہے .بھارت دنیا مین کپاس پیدا کرنے والا سب سے بڑا ملک بن گیا ہے .کپاس کی پیدوار مین مسلسل کمی کی وجہ سے 600 کروڑ ًالر کا نقصان ہوا ہے .بین الاقوامی کپاس مشاورتی کمیٹی ( I C A C ) کی رہورٹ کے مطابق چار ممالک امریکہ بھارت چین برازیل ہیں .چین اور برازیل کپاس کی کل پیدوار کا 75 فیصد پیدا کرتا ہے .جس مین بھارت 25 فیصد کے حساب سے پہلے نمبر چین 23 فیصد دوسرے نمبر پر امریکہ 15 فیصد تیسرے نمبر پر ہے .2019 تا 2020 کپاس کی پیدوار 22.9 ملین ٹن رہی ہے .امسال 2020 تا 2021 مین 25 ملین ٹن پیدوار متوقع ہے. بھارت اس سال 12 ملین ہیکٹر رقبے پر کپاس کاشت کی ہے جب کہ پاکستان میں کپاس کی پیدوار 14 ملین بیلز سے کم ہو کر 7… 8 ملین رہ گء ہے .ہمیں ہر سال 40 لاکھ بیلز درامد کرنی پڑتی ہیں .جس کی وجہ سے پاکستان کی ٹکسٹائل انڈسٹرئ� ی بری طرح متاثر ہوتی ہے .کپاس دراند کرنے کی وجہ اشیائ� کی لاگت میں اضافہ ہوتا ہے پاکستان دنیا بھر میں کپاس کی کاشت کے حوالے سے تیسرے نمبر ہر تھا پاکستان کا بمبر چین اور امریکہ بعد اتا تھا .کپاس کی پیدوار مین مسلسل کمی کی وجہ ٹکسٹائل کی برامدات متاثر ہو سکتی ہیں.ہمارا شعبہ زراعت زبوں حالی کس شکار ہے . حکومت 7.5 ارب ڈالرز کی سالانہ زرعی اجناس درامد کرتی ہے .192 ارب کی کپاس 160 ارب کی گندم 100 ارب کی دالیں 90 ارب کیچائے اور اتنی ہی رقم کے مصالحہ جات اور 25 ارب کی چینی درآمد کرتی ہے .کبھی سنہری زمانہ تھا جب پاکستان زرعی اجناس برامد کرتا تھا . قائداعظم نے ایک زرعی اور صنعتی ملک کا خواب دیکھا تھا .لیکن آج ہم نے ملک کو زرعی اجناس درآمد کرنے والا ملک بنا دیا ہے .سٹیٹ بنک کی چشم کشا رپورٹ ہے کہ گنے اور دیگر فصلوں کے مقابلے میں گنے کاشتکار گھاٹے میں رہتے ہیں . گنا کی کاشت پورا سال زمین کو پابند رکھتی ہے ناقص بیج کی بنا پر فی ایکڑ پیداوار بھی کم ہوتی ہے.پاکستان دنیا میں 80 کی دھاء میں کپاس کی پیداوار کے حوالے کبھی دوسرے نمبر پر تھا .90 کی دیہاء مین تیسرے نمبر ہر اگیا اب ہماری ناقص منصوبہ بندی کی بنا پر ہانچویں نمبر ہر اگیا ہے .مرکزی حکومت صوبائی حکومتون کو اعتماد میں لیکر اس حوالے سے ہنگامی بنیادون پر انقلابی اقدامات کرے . اگر بر وقت اقدامات نہ کئے گے تو پاکستان کپاس پیداکرنے ممالک مین اپنا مقام کھو دے گا .پاکستان مین مجموعی زیر کاشت رقبہ 12 کروڑ85 لاکھ 780ہزار 8 دو 8 ایکڑ ہے جس میں سات کروڑ 96لاکھ دس ہزار ایکڑ رقبہ زرعی اراضی اور جنگلات ہر مشتعمل ہے .پاکستان میں کل زیر کاشت رقبہ 11 فیصد ہر چاول کاشت کیا جاتا ہے .چاول کی پیداوار 6 ملین ٹن سے تجاوز کر گئی ہے . مجموعی پیداعار میں زراعت کا حصہ 21 فیصد ہے .کپاس کی کم پیداوار نے باقی تمام اجناس کی پیداوار کے اضافے کو ٹکے ٹوکری کرردیا ہے . کپاس پاکستان کی نقد اور فصل ہے ٹکسٹائل برامدات کا انحصار اس پر ہے اس پر بھر پور توجہ دینے کی ضرورت ہے .

Insect pest of date palm and their control

             ssiddique560@gmail.com

 

Scientific classification:

Scientific name: Phoenix dactylifera L.

Family: Arecaceae

Order: Arecales

DATES:

Dates are usually found in desert environment. There are almost 220 varieties of dates, about which 20 are commercially worthwhile. Dates are considered widespread food in the Middle East. Major portion of the Middle East is not suitable for date palm production. Among few crops, it grows well in the desert. They are designated as the “tree of life.”

Pakistan is 5th country in production of dates. Its annual production is 0.73 million tonnes of world’s production. Its common name is ‘khajoor.’ The major date producing areas are Bannu, Dera Ismael khan and sakhar. The production of D.I khan is 4002 tonnes. Dates are regarded as primitive crops. During Ramadan, dates have been traditionally used by Muslims to break their fast. Date fruits are oval-cylindrical in shape having length of 3–7 cm (1.2–2.8 inches), and diameter of 2–3 cm (0.79–1.18 inches) and on ripening, it becomes bright red to bright yellow in colour, depending upon variety. There is single stone present in date fruit, of about 2–2.5 cm (0.8–1.0 inches) long and 6–8 mm (0.2–0.3 inches) thick.

Two thirds of the world’s dates are provided by the Middle East. In world, the major date producing countries are Egypt, Iraq, Iran, and Saudi Arabia.

Description of Date palm tree:

Usually the height of date palm tree is 21–23 metres (69–75 ft). The tree grows single or forming a clump with several stems. The leaves have length of 4–6 metres (13–20 ft) having spines on the petiole. The length of leaflets is 30 cm (12 inches) and 2 cm (0.79 inches) of width.

The date palm is dioecious in nature means that having separate male and female plants. The sowing of date palm is easy from seed, but it may be of poor quality. Thus, most marketable farms use cuttings from well growing cultivars. The Plants which are grown from cuttings give fruit 2–3 years earlier than the seedling plants.

Pollination:

There are two ways of pollination in date palms that is natural and artificial pollination. The pollination in dates naturally occur through wind, but in traditional and modern orchards, manual pollination is done. The equal numbers of male and female plants are required for natural pollination. But, only one male can pollinate up to 100 females. As the males are valuable as pollinators, so growers use for many fruit producing female plants. According to requirement, some growers even don’t grow any male plants, as these are available at local markets. But manual pollination is done by skilled persons or through wind machines.

Uses of dates:

In harsh conditions, dates are valuable source of food. They are very rich source of vitamins, electrolytes, minerals and Phyto-nutrients etc.

  • The fibre in dates helps in preventing constipation.
  • Dates also improve heart condition including its functioning.
  • One of their effective benefits is to maintain cholesterol level.
  • Dates are important source of copper, magnesium and manganese, all of them are important for human bones.
  • They also maintain blood pressure and improves human brain health.
  • They promote energy in body and help in gaining of body weight.
  • They prevent hair losses and contain vitamin C and D that improves skin elasticity.